اسحاق وردک کا شعری انتخاب۔۔۔۔۔۔ تحریر زوہان ربانی عابد

اللہ تعالی کچھ لوگوں کو جب اس دنیا پر بھیجتا ہے تو خاص صلاحیتیں عطاء کر دیتا ہے۔ ایسے لوگ  ہوش سنبھالتے ہی ان صلاحیتوں کا پوری محنت ،لگن اور ایمانداری سے استعمال کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ ہو سکتا ہے ان کی راہ میں مخلوقِ خدا روڑے اٹکائے یا اللہ رب العزت ان کی صلاحیتوں کو مزید نکھارنے کی خاطر انہیں چند آزمائیشوں اور امتحانوں میں سے گزارے۔ بہت سے لوگ یہاں پر آ کر مار کھا جاتے ہیں اور صبر کا دامن اپنے ہاتھ سے چھوڑ دیتے ہیں۔ مگر کچھ لوگ ایسے بھی ہوتے ہیں جو مشکلات اور مصائب سے لڑتے ہوئے آگے بڑھتے رہتے ہیں اور بالآخر سرخروئی حاصل کرتے ہیں۔
میرے آج کے مہمان کا شمار بھی اللہ کے ایسے بندوں میں ہوتا ہے۔
24 اپریل 1977ء کو کوچہ ءِ رسالدار قصہ خوانی پشاور میں آنکھ کھولنے والے محمد اسحاق خان بچپن سے ہی سلجھی ہوئی طبیعت کے مالک ہیں۔ آپ کو ابتدائی تعلیم کے لیے ایڈورڈز ہائی اسکول پشاور میں داخل کروایا گیا۔ ساتویں جماعت میں پہنچے تو ادبی رسائل اور میگزین پڑھنے کا شوق چرایا اور بہت جلد لکھنے کی خداد صلاحیت کے ہاتھوں مجبور ہو کر کاغذ قلم تھام کر لکھنا شروع کیا۔ اور دیکھتے ہی دیکھتے اسحاق خان کی تحریریں انہی میگزینز کی زینت بننے لگ گئیں۔ بچوں کے ادبی مجلے۔ ماہنامہ پھول۔ مجاہد اور بہت سے دوسرے ادبی صفحات کے لیے لکھتے رہے۔
“بچوں کے ادب و دعوت اکیڈمی” سے نشان اعزاز حاصل کرنے والے خیبر پختونخواہ کے واحد مصنف کالج تک پہنچتے پہنچتے اسحاق وردگ کے نام سے اپنی پہچان بنا چکے تھے۔
گورنمنٹ کالج پشاور سے انٹر اور اس کے بعد پشاور یونیورسٹی سے اردو میں ماسٹر ڈگری حاصل کرنے کے بعد اردو میں ہی ایم فل کیا۔ اور شعبہ درس و تدریس سے منسلک ہو گئے۔
اس دوران مختلف ادبی صفحات کی ادارت کے فرائض نبھاتے رہے۔ 2007 سے 2011 تک پشاور میں ایک ادبی تنظیم کے جوائنٹ سیکرٹری رہے۔ اور صوبہ سرحد کے مختلف مقامات اور گلی کوچوں وردکسے گمنام شعراء اور ادیبوں کو جمع کر کے ادبی منظر نامے پر لائے۔
ان دنوں پشاور دہشت گردی کی لہر کی لپیٹ میں تھا۔ اسحاق وردگ بھی اس لہر کی لپیٹ سے خود کو نہ بچا سکے اور اپنا جواں سالہ بھائی خونی لہروں کی نذر کر کے وطن کا قرض چکایا۔
مگر ہمت نہیں ہاری اور ادبی سفر جاری رکھا۔ فیڈرل گورنمنٹ کالج نوشہرہ میں شعبہ اردو کے پروفیسر کے فرائض انجام دے رہے ہیں۔ اور اس کے ساتھ ساتھ تیزی سے پھیلتی ہوئی ادبی تنظیم انجمن جدت پسند مصنفین کی صدارت بھی سنبھالے ہوئے ہیں ۔حال ہی میں معروف شاعر نشاط سرحدی صاحب پر پی ایچ ڈی مکمل کی ہے۔
اسحاق وردگ کا نام نہ صرف خیبر پختونخواہ بلکہ پورے ملک کے ادبی منظر نامے پر معتبر حیثیت اختیار کر چکا ہے۔ آئے دن مختلف مشاعروں میں یار لوگ ان کے کلام سے محظوظ ہوتے رہتے ہیں۔ بہت جلد ان کا شعری مجموعہ منظر عام پر ہو گا۔ زیر ترتیب شعری مجموعے سے کچھ اشعار صاحبان ِ ذوق کی نذر۔

میں خالی گھر میں بھی تنہا نہیں تھا
کہ جب تک آئینہ ٹوٹا نہیں تھا

جہاں سیراب ہوتی تھی مری روح
وہ صحرا تھا کوئی دریا نہیں تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کاغذ کے بنے پھول جو گلدان میں رکھنا
تتلی کی اداسی کو بھی امکان میں رکھنا

ایک فتوی’ ہمارے فرقے پر!
ہم محبت کو دین کہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔

اس پار کا ہو کے بھی میں اس پار گیا ہوں
اک اسم کی برکت سے کئی بار گیا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خیرات میں دے آیا ہوں جیتی ہوئی بازی
دنیا یہ سمجھتی ہےکہ میں ہار گیا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تھامے ہوئے اک روشنی کے ہاتھ کو ہر شب
پانی پہ قدم رکھ کے میں اس پار گیا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مشکل ہے تجھے آگ کے دریا سے بچا لوں
اے شہرِ پشاور میں تجھے ہار گیا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے بھی راہِ محبت میں قدم رکھّا ہے..
قیس کو آخری معیار نہ سمجھا جائے…
۔۔۔۔۔۔۔۔
ہماری خاک ہی میں مسئلہ ہے۔،
شکایت کچھ نہیں کوزہ گروں سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فلک کے راز سارے کھول دوں گا
ابھی میں وجد میں آیا نہیں ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سمندر کو بھی پی لوں گا کسی دن
میں صحرا ہوں کوئی دریا نہیں ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عجب کردار ہوں میں زندگی کا
کہانی میں کبھی آیا نہیں ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھے گم نام ہی مرنا پڑے گا
کسی کے دل پہ میں لکھا نہیں ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اس سے خواب کے رستے پہ ملنے والا ہوں
مگر وہ نیند سے بیدار ہونے والا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
طوفاں کی طرح دشت کے منظر سے اٹھا ہے
وہ شخص جو ہارے ہوئے لشکر سے اٹھا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سائے کو موت سے جو بچانا پڑا مجھے
سورج کے ساتھ ڈوب کے جانا پڑا مجھے
دل اس کے التفات پہ مائل نہیں رہا
وہ آگیا تو موڈ بنانا پڑا مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے ساتھ اٹھتا بیٹھتا تھا..
وه اک بنده خدا ھونے سے پہلے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پھر بھی وہ دربدر نہیں ہوتے
جن فقیروں کے گھر نہیں ہوتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چلو مسکراتے ہوئے ڈوب جائیں
کہ قسمت میں کوئی کنارا نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناچ اٹھے بگولے بھی جھوم اٹھی تھی وحشت بھی
ایک بار صحرا سے شام کو میں گزرا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

روح کی تجسیم سے ممکن ہوئی ہے زندگی
لامکاں کے واسطے بھی اک مکاں ہونا ہی تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے خوابوں سے کھیلنے والے
کھیل کے بھی اصول ہوتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب شام ہے تو شہر میں گاؤں کے پرندے
رہنے کے لیے کوئی شجر ڈھونڈ رہے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم اہلِ عشقِ حقیقی ہیں جان لو صاحب
ہمارا وقت الگ ہے،جدا زمانہ ہے

Views All Time
173
Views Today
1
(Visited 133 times, 1 visits today)

3 Comments

  1. زوہان ربانی عابد

    بہترہے اب پہلے سے

  2. ALLAH SIR ISHAQ WARDAG SB ko Or bhi kamyabi or kamraniyon se nawazen.
    Mujhe fakhar hai k jo 2 saal me ne Sir Ishaq k zer-e-saya guzaren hain wo meri zindagi k khubsurat tareen aayyam the..
    Unka ik sher jo k aksar mujhe be ikhtyar yad ata rehta hai.
    Lecture k doran unhon ne 2012 me sunaya tha or abhi tk naqsh hai mere la shaoor k parde pr.
    “Falak k raaz sare khol dunga
    Abhi me wajd me aya nahi hu”
    Jb bhi Sir se mulaqat hui chahe bazariya call ya face to face wahi shafqat, wahi lehja wahi muhabbat bhra anokha andaz paya. ALLAH Sir ko lambi zindagi de ta k wo yunhi urdu ki khidmat krte rhen or hum un ki zaat se fezyab hote rhen.

    Engr. Luqman Bahar Shahid

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

3 × four =