بوب کا چائے خانہ

تحریر : اسد محمد خان

وہ اپنے  تیوروں  میں  جزائرِ  انڈمان  جیسی  کوئی  جگہ  تھی  سیکیورٹی  اور  تجارت  کے  اعتبار  سے  منظبط  اور  سب  معاملوں میں بالکل  غیر  منظم ، بلکہ ‘ چھوڑ  دی  گئی  جگہ ۔

میں  اور  میرا  میزبان  پہلی  بار  شہر  کی   سیر  کو  نکلے  تھے ۔

شام ہوتے  ہوتے  ، میرا  میزبان  مجھے ایک  پرانے  ٹی  ہاؤس  میں  لے  گیا جو  شاید  انیسویں  صدی  کے آخر  میں  قائم  ہوا  تھا ۔ یہ  چائے  خانہ  ، شہرِ لندن  کے رہائشی  ، ایک  جھکی  چائے  نوش  ، بوب  پینٹل  نے  بیچ  بازار  قائم  کیا  تھا ، سو  خوب  چلتا  تھا ۔

ٹی  ہاؤس  کھولنے  والے  پنٹل  صاحب نے ۔۔۔۔۔۔ جو  خیر  سے  ہمیشہ  کنوارے  رہے  ، اس  زمانے میں ایسا  انتظام  کردیا  کہ  ان  کے  بعد  لندن شہر  کی  ایک  فلاحی  تنظیم  نے یہاں آکر  اسکا  نظم  و نسق  سنبھال  لیا  تھا ۔  یہ فلاحی ادارہ  سو  برس  گزر  جانے  کے  بعد  بھی  بڑی  ” لیاقت  ”  سے اس چائے  کانے  کا  انتظام  سنبھالے  ہوئے  تھا  ۔

منظم  فلاحی  ادارے  پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور  جملہ  گاہکوں  پر  آنجہانی  بوب  کے  غیر  قانونی   مشیروں نے  ضابطے  کی کچھ  پابندیاں عائد  کی  تھیں ۔

ضابطے   کے  مطابق  ٹی  ہاؤس  کی انتظامیہ پر  ، اور  گاہکوں پر ، یہ  ایک  بات  لازم  تھی : اور  انہیں  ہر صورت  یاد  رکھنی  تھی  کہ یہاں  وہ  اعلیٰ  درجہ  کی  پتیوں  سے  بنائی  گئی  چائے  میں  کسی  بھی  مرحلے  پر  ،  دودھ   وغیرہ  ملانے  کے  مجاز  نہیں  ہوں  گے ۔ (پیریڈ) ۔

موجودہ  منتظمین کی  جانب  سے  ، چار  بار ضابطے  کی  خلاف  ورزیاں  ثابت  ہوجانے  کی  صورت  میں پنٹل ٹرسٹ  ، کے خرچ پر ، کسی  بھی  وقت  ٹی  ہاؤس  کا نظم  ونسق ، اس  ادارے  سے  لے  کر  کسی  بھی  دوسرے  ،  تیسرے یا  چوتھے کسی ادارے  کے  سپرد  کر  سکتا  تھا ۔ ؤاضح  رہے کہ  بیان کیے  گئے  بیان  کیے  گئے  اداروں کی تفصیل  بنیادی  دستاویزات میں درج  نہ  تھی ،  تاہم  ہم  ان  اداروں کے  نگران اور  جاسوس  وغیرہ ، بوب پنٹل  ٹرسٹ  کے  خرچ پر ، وقتاََ فوقتاََ ، یہاں  آکر  چھاپے وغیرہ  مارتے  رہتے تھے ۔

گاہکوں  کی  خلاف  ورزی  پر  ، انتظامیہ  کو  ایک  سادہ  سی  کارروائی   کی  ہدایت  کی  جاتی  تھی : جو یہ  تھی  کہ  کہ  خلاف ورزی  کرنے  والے گاہک  ، یا  گاہکوں کو ( خواہ  ان  میں خواتین  بھی  کیوں  نہ شامل ہوں ) معذرت کے ساتھ ٹی  ہاؤس سے  نکل  جانے  پر  مجبور  کردیا  جائے ۔ ساتھ   ہی  ایسا  کوئی  بندوبست  کیا  جائے کہ خلاف ورزی  کرنے والے خلاف ورزی  کرنے  والے  گاہک  دوبارہ ٹی  ہاؤس  میں داخل  نہ  ہوپائیں ۔

ٹی ہاؤس  کی اپنی  بیکری  میں جملہ قسم کے بسکٹس ، ککیز ، کیک وغیرہ  تیار  کیے  جاتے  تھے ۔ ان بسکٹوں ، بنوں ، کیکوں ، کو ، کسی  بھی صورت میں چائے یا  کسی  اور  مشروب میں تھوڑا ڈپ کرکے ، پورا  ڈپ  کرکے  یا   تر  کر  کے  کھانا منع تھا ۔ بچوں  اور  عمر  رسیدہ  مردوں اور  عورتوں  کو بھی  اس  ضابطے  کی  پابندی  کرنا  ہوتی  تھی  ۔ کچھ  بھی  کر  کے  بلند آواز میں برپ کرنا ، ڈکار  لینا اول درجے  کی  بے ضابطی  تھی ۔ گاہکوں  کا  اونچی  آواز میں بات کرنا ، رونا ، گانا ، کسی  بھی  عبادت  کا  گیت  یا  اشلوک پڑھنا ، تلاوت  کرنا اور  وجودِ مطلق  یعنی  اپنے  پروردگار  سے  بلند آواز  میں ملتمس  ہونا ، حد یہ  کہ اس (مطلق) کی بالارادہ اس  ثنا  کرنا  کہ  قریب  بیٹھا  آدمی  بھی  سن  لے  ،  بے  حرمتی اور  دکھاوے  کی  ذیل  میں آتا  تھا ۔

یہ  سب  کرنے  والے  گاہک  کو  یاد  دلایا  جاتا  تھا  کہ  کہ ٹی  ہاؤس  کی مغربی  دیوار کے  ساتھ  بہت  سے  ساؤنڈ  پروف  کیبن  بنے  ہیں جہاں رونے  ، گانے  والوں  ، اور  تلاوت  کرنے  ، ملتمس ہونے  ، اور  اونچی آواز میں باتیں کرنے  والوں  کے  لیے مناسب  نشستیں  اور  پرائیویسی  فراہم  کی  گئی  ہے ۔  تو  اگلی  بار  ، یہ بات  بھولنے  والے گاہک  کو  کسی  بھی  ساؤنڈ  پروف  کیبن  میں  جانا  ہوگا  ۔

یہ  سارا  جھکی  پن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یا  سمجھو  پابندیاں سختیاں ، اپنی  جگہ ، مجھے  تو  اس  ٹی  ہاؤس  میں کھانے  پینے  کی  جگہوں  کا  معیار  اور  انکی  قیمتیں  دوسری  سب  جگہوں  کے  مقابلے  میں  مناسب  لگیں ۔ اس  کے  علاوہ  یہاں گاہکوں کو  ، ہر  وزٹ  پر  ، انتظامیہ  کی  طرف  سے  ایک  خوبصورت  سا  کارڈ  دیا  جاتا  تھا ۔  سال  بھر  میں  سو  کارڈ  پانے  والے  گاہک  کو  تاحیات  ممبر  کا  درجہ  مل  جاتا  تھا ۔ ایسے  گاہکوں کو  ممبری  کے  پہلے  سال  ، بلوں  پر  دس  فیصد   کی  چھوٹ  دی  جاتی  تھی  ۔ وقت  گزرنے  کے  ساتھ  ساتھ تاحیات  گاہکوں  کو  ، ، درجہ بہ درجہ بڑھتے  ہوۓ  تحائف  ملتے  رہتے  تھے  ۔ بیس  برس  کے  وفادار  گاہک کو دو  افراد  کے  لیے جزائر  برطانیہ میں تیس  دن  قیام  کا مناسب خرچہ  اور  آنے  جانے  کا ٹورسٹ  کلاس  ہوائی  جہاز  کا ٹکٹ  دیا  جاتا  تھا ۔ ٹی  ہاؤس  کی  شمالی  دیوار  پر  ایسے  تمام  خوش  نصیبوں  کی  فریم  کی  گئی  تصویریں  لگی  تھیں  جو  تیس  تیس  دن  کے  دورے  پر  برطانیہ  ہو  آۓ  تھے ۔ مشرقی  دیوار  کے  متصل  کائونٹر  بنا  تھا ۔

ساتھ  ساتھ  ہی  ایک  بھاری  برکم   فرنیچر  پیس  پر  پیتل  کا  چمچماتا  ہوا  کتبہ  نصب  تھا ۔  کتبے  پر  وہ  تمام ہدایات نصب تھیں جو  اوپر  بیان  کی  گئیں ۔ برابر میں ایک  پیڈ یسٹل پر  سنگِم مر مر سے بنا  ایک گنجے انگریز کا ، شانوں تک کا بت  رکھا  تھا ۔ وہ  انگریز  اپنی  بے نور آنکھوں  سے  ، بہت  بھنا  کر ، ناک  کی  سیدھ  میں مستقل  دیکھے  جا رہا  تھا ۔

میزبان  نے  جو  کاؤنٹر  پر  بطور  مہمان  میرا  نام  درج  کراچکا تھا ، میرے  کان  کے  پاس  منہ لے  جا کر  کہا ، ” سر دیکھیۓ ، یہ  رابرٹ  پینٹل  صاحب  کا  بت  ہے “

اگر   چہ   اس   کی   چنداں  ضرورت   نہ  تھی  ،  تاہم   میں  نے  جواب  میں   دھیرے    سے   کہا  ، ” ماشاء اللہ “۔

Views All Time
117
Views Today
1
(Visited 41 times, 1 visits today)

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

sixteen − fourteen =