رقص۔۔۔۔۔۔۔

ناچ برہنہ پا ناچ ۔ ۔ ۔ انتظار کا کرب کہ جو اس گھنگرو کی مانند ہے جسکی آواز دور کسی وادی سے اٹھتی ہے اور محلوں میں چین و قرار کی نیند سونے والے مست آقاؤں کی خمار آلود آنکھوں کے سارے خمار جھٹکے سے چھین لیتی ہے۔

raqssاور آقا سارے اس انتظار کے کرب کی لذت پانے کو دیوانہ وار اس وادی کی طرف دوڑتے ہیں اور رستے میں کہیں خاک ہوجاتے ہیں۔ ناچ کہ وہ کرب کے گنگھرو کی گونج تیرے ہی نصیب کی کسی وادی سے آتی ہے۔ سن اے مقدر کے دھنی ناچ سے کام نہیں ، ناچ کو اب تو رقص کر۔ ۔ کچھ پوچھ مت، آج تو رقص کر۔ ۔۔ کر رقص کہ دعائے وصل آج قبول ہے۔ آہ ! وصل جسکی چاہ نے سینکڑوں بدنصیبوں کو خاک چٹائی ، پر تو اے بد نصیبوں کی بستی کے آخری آخری شاہ نصیب خاک اڑا کہ جہاں اڑا کہ وصل نے تجھے پکارا ہے۔ تو رقص جاری رکھ کہ برسوں میں پہلی بار اس خاک میں لپٹی چاند چہرہ نے اپنی مرقد پہ گلاب سجانے کو بس تمہیں ہی پکارا ہے۔

Views All Time
124
Views Today
1
(Visited 147 times, 1 visits today)

8 Comments

  1. Shumaila Naz

    This is phenomenal…a heart touching writing style.Abdul Basit bhaiya keep it up.it really touches my heart that i couldn’t stop myself from commenting.

  2. fab. piece of writing.

  3. Theme is good for write up and no doubt it contains messages but to whom? these sentences will receive criticism r not I don’t know, but some creativity attempt has been made.

  4. impressive, kia khoob andaz aur alfaz ka chunao kia hy apne.. boht umdah A.Basit,,

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

eight + eighteen =