کمرشل صوفیوں کے نام قلندری لاہوری کا پیغام

گھر سے بن ٹھن کے صوفیہ نکلے

لے  کے  عرشوں  کا  تخلیہ نکلے

دل  میں  شوقِ  زرِ  مطلب     لے

آستانوں   سے  روسیہ      نکلے

بے وسیلہ  خدا  کے  طالب  ہیں

تارکِ  طورِ   چشتیہ        نکلے

 بھول  کر  حب  ذاتِ اولیٰ   کو

دہر یابی   کا   زاویہ     نکلے

ظاہری رنگ  جن  کا کالا تھا

سات رنگوں  کا حاشیہ نکلے

چھوڑ کر مسندِ حرم  لاریب

زائرِ  ارضِ  بادیہ      نکلے

ماہرِ نفسانیت کا پھن لے کر

صاحب   وہمِ  تزکیہ   نکلے

Views All Time
105
Views Today
1
(Visited 49 times, 1 visits today)

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

8 − five =