Author: Ashkar Farooqi

غزل
Literature

غزل

مثالِ کوزۂ صحرا کہیں بھی دھر دیا جائے یہ کارِ ھجر ھے اس کو تمام کر دیا جائے دلِ فراق زدہ کو کہاں ھے فرصتِ غم سو بےدلی سے ھی اب زیست کو بسر کیا جاۓ خبر رساں نہ کوئ پیک خیمہ گاہ میں ھے چلو چراغِ دل و جاں […]

ہوا چلی ہے۔۔۔۔۔۔
Literature

ہوا چلی ہے۔۔۔۔۔۔

ھوا چلی ھے چراغ بھی جھلملا رھے ھیں کہ روشنی کا ھر ایک سایہ لپک رھا ھے لپک رھا ھے کہ تیرے ھونٹوں کا ایک بوسہ اسے ملے تو وہ قریہ قریہ ستارہ بن کر مہکتا جائے ھوا چلی ھے مہک رھے ھیں گلاب نیلے ھرے بھرے سارے راستوں پر […]

!خدا بخشا
Literature

!خدا بخشا

خدا بخشا ترے مزدور ہاتھوں نے جہاں کی کھردراہٹ کو بہت نزدیک سے دیکھا کبھی تو کارخانوں کی تعفن زاد غاروں میں بدن کے عرق کو اپنے مساموں سے بہاتے درد لمحوں میں یہی تو سوچتا ھوگا زمانہ ریل کی یکسانیت سے یونہی چلتا ھے اور اس کی بے نمک […]

غزل
Literature

غزل

 چراغ اس لئے بازار میں جلا ھوا نئیں کہ قرض_عشق کا دینار بھی ادا ھوا نئیں ھماری داھنی جانب ھے حوض_آب_حیات اور اک سبو بھی ھمارا ابھی بھرا ھوا نئیں یہ حسن وعشق سے آگے کی بات ھے صاحب یہ اور قصہ ھے یہ آپ کا سنا ھوا نئیں شمار […]

تناؤ سے مڈبھیڑ
Literature

تناؤ سے مڈبھیڑ

غلاظت کے ڈھیروں سے وابستگی کا تناؤ ھٹاکر تمہیں زیرجامہ کسے ڈھونڈنا ھے تمدن کی حیرت……. بجا اور بے شک نگہ کی کسی تشنگی سے پرے بھی بدن کی حرارت کا ایک اصطبل ھے جہاں آدمی زاد اوڑھے ھوئے سگ کی پوشیدگی کو تناؤ سے مڈبھیڑ کرتا رھا ھے غلاظت……………طہارت […]