زباں دراز

pc: Sufyan Aftab
pc: Sufyan Aftab

 تحریر : شبہ طراز

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور تھا ہی کیا میرے پاس۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنے غم و غصے کے اظہار کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہی جو ہر گھر دار عورت کے پاس ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔۔ گز بھر کی لمبی زبان ۔۔۔۔۔۔۔ اور کیوں نہ ہو ، جب کسی ہنر کو ہنر نہ مانا جائے ، کسی سلیقے کو خاطر میں نہ لایا جائے ، کسی اخلاق کی قدر نہ کی جائے ، دی گئی قربانی کو اہمیت نہ دی جائے تو پھر،  یہی کرنا پڑتا ہے ، یہی کام آتی ہے ۔۔۔۔۔ تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے اس سے خوب کام لیا ۔

کام والی نہ آتی ۔۔۔۔۔۔ توبھی ، اگلے دن آتی اور کام جی لگا کر نہ کرتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تب بھی ، بچے شور مچاتے ۔۔۔۔۔۔۔۔ وقت بے وقت کھانے کو مانگتے ۔۔۔۔۔۔ اس وقت بھی ، محلے پڑوس کی عورتیں اپنے گھروں میں زیادہ پانی بہاتیں ۔۔۔۔۔۔ تب ، ان کے بچے شور دنگا کرتے ۔۔۔۔۔۔۔ بہر حال  یہی میرے کام آتی اور شام   تک بول بول کر جیسے کلیجے میں ٹھنڈک پڑجاتی ہے ۔۔۔۔۔ اور تو اور اگر سارا دن یہ بھڑاس نہ نکل پاتی تو بچوں کے ابا آتے ہی پر اپنا رنگ جمانا شروع کردیتی ۔

بہت عرصہ اسی طرح گزر گیا ، دائیں بائیں کھڑے ہونے والے مکان دو منزلہ اور کچے گھر پکے ہو گئے ۔۔۔۔۔۔۔ پہلے پہل محلے سے شکایتیں آنا شروع ہوئیں پھر رشتہ داروں نے باتیں بنائیں ، بچوں نے جب باپ سے بھوک اور پیاس کے شکوے کرنا شروع کیے تو انہیں حالات کی سنگینی کا اندازہ ہوا ۔ جب میری زبان سے انہوں نے بے زاری کا اظہار کیا تو میں دل مسوس کے رہ گئی ۔ جھگڑا اتنا بڑھا کہ لگتا تھا ماحول کی کثافت سے لے کر عالمی سیاسی توڑ جوڑ تک ہر چیز میں میری زبان کا ہاتھ ہے۔ سو ایک دن بینگن چھیلتے چھیلتے مجھے  نجانے کیا سوجھی کہ میں نے اپنی زبان کاٹ لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اتنا عرصہ ساتھ  رہنے کی وجہ سے مجھے اس سے اور اسے مجھ سے انسیت ہو چکی تھی ، اس کی خاموشی غم ناک آنکھیں کوڑے میں پھینکنے کی بجائے کاغذ کے ایک تھیلے میں بند کرکے  پرس میں رکھ لیا ۔یوں وہ صرف مجھ سے رابطے میں رہ گئی ۔  رابطہ بھی کیسا، جب مجھے یاد آتی میں پرس میں جھانک کر اسے دیکھ لیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دیکھ لینا بھی اس لیے ضروری ہوگیا کہ ہر خارجی عمل کے ردِ عمل میں یہ میرے پرس میں پڑی بولتی رہتی ۔۔۔۔۔ اور شام تک میرا پرس پھول کر کپا ہوجاتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لا محالہ مجھے اسے باتوں سے خالی کرنا پڑتا ۔ میں کبھی کسی کیاری میں خالی کردیتی ، کبھی کسی گملے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کچھ عرصہ بعد میں نے محسوس کیا کہ جہاں جہاں میں پرس خالی کرتی ہوں وہاں ایک کمزور ناتواں سا پودا نکل آتا ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خود رو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں نے سوچا مجھے احتیاط کرنی چاہیے ، کہیں ساری باتیں یا انکی مہک محلے ، شہر ، گاؤں گاؤں نہ پھیل جائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ سوچ کر میں نے اپنے کچے صحن کے کونے میں ایک گہرا گڑھا کھود لیا ۔ اب مجھے کچھ اطمینان ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ معمول کے مطابق روزانہ رات کو میں باتوں سے بھرا پرس اسی گڑھا میں ڈال دیتی ، اور اس پر کچھ مٹی ڈال دیتی ۔ مسکراہٹ میرے چہرے پر بھی کھیلنے لگی تھی جس پر لوگ کچھ زیادہ خوش تو نہیں تھے لیکن میری زبان درازی کی خوشی میں یہ رعایت دے دی گئی تھی ۔ گھر کے ، ارد گرد کے تمام کام خوش اسلوبی سے چلنے لگے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بچے نہال تھے کہ ان کے شور مچانے پر میں کچھ نہیں کہتی بلکہ ان کے لیے ہر وقت گرما گرم نوڈلز اور آلوؤں کی چپس فرائی کرتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہمسائے خوش تھے کہ وہ جتنا پانی بہائیں اور بیشک ان کا بہایا  ہوا پانی میرے گھر کی ڈھلوان پر رک کر جھیل ہی کیوں نہ بنا ڈالے ۔ میں جواب میں کچھ بول ہی نہیں  سکتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کام والی کی تو جیسے موجیں ہی ہوگئیں تھیں ۔۔۔۔۔۔ خوب من مانی کرتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جھاڑو دیتے ہوۓ میری طرف معنی خیز نظروں سے دیکھتی اور اونچے  اونچے گانے گاتی جیسے مجھ سے کسی بات کا بدلہ لے رہی ہو ، ناچ ناچ کر جھاڑ پونچ کرتی اور مسکرا مسکرا کر  برتن دھوتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بچوں کے ابا تو پہلے ہی میری سنی ان سنی کردیتے تھے ، اب کیا سنتے۔۔۔۔۔۔ ؟ رفتہ رفتہ وہ بڑی ہونے لگی اور اس پر نہایت ہی خوبصورت سرخی مائل پتے نکلنے لگے ۔ پتے اتنے خوبصورت کہ ایک انجانے خوف کے باوجود میں  نے اس کی حفاظت کی  ذمہ داری سنبھال لی۔ اس کو سینچنا شروع کردیا ۔ دن بھر اس کو دھوپ سے بچانے کے لیے ہلکا سبز کپڑا اس پر تان دیا ۔ ٹھنڈا میٹھا پانی اپنے حصے کا بھی اس پر ڈال دیتی ، دو وقت اس پر چھڑکاؤ کرتی اور رات کو ہمیشہ اپنی باتوں سے بھرا پرس اس میں ڈال دیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دن مہینوں میں اور مہینے سالوں میں بدل گئے ۔ وہ ننھا سا پودا بڑا ہوکر قد آور درخت میں بدل گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ درخت کی شاخیں سارے صحن میں پھیل گئیں ، کچھ شاخیں دیوار سے دوسری طرف ہمسائیوں کے گھروں میں بھی جھک گئیں تھیں ۔ لیکن اس درخت کی نگہ داری میں میں سوکھ کر کانٹا ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لوگوں کو اب یہ پریشانی تھی کہ میں سوکھ کر کیوں کانٹا ہوگئی ہوں ۔ میرا کھلا کھلا چہرہ بے رونق کیوں ہوگیا ہے ۔

کمزوری کے مارے میرے چہرے پر آنکھیں ہی آنکھیں رہ گئی تھیں ۔ اور مجھے پریشانی اس بات کی نہیں تھی کہ درخت کے پتے ہوبہو میری زبان جیسی  شکل کے تھے بلکہ مجھے اصل پریشانی یہ تھی کہ کچھ دنوں سے میری آنکھیں بھی بولنے لگی تھیں ۔

Views All Time
55
Views Today
1
(Visited 38 times, 1 visits today)

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

fifteen + 6 =